کیا دعا میں واقعی انتی طاقت ہے کیا دعا میں واقعی انتی طاقت ہے

وہ وقت یاد ہے جب کچھ تھا جس کو میں اپنی زندگی میں واقعی ہی حاصل کرنا چاہتا تھا ۔میں نے محسوس کیا یہ اچھا تھا، لیکن جب یہ کام نہیں کر رہا تھا ،میں مایوس ہوا اور نہیں سمجھ پایا کہ ہم کسی چیزکو حاصل کرنے کے لیے دعا کیوں کرتے ہیں ایسے ایمان کے ساتھ جو کہ ہماری خواہش کے مطابق کام ہی نہیں کرتی ۔ایک بات جو میں سمجھ نہیں سکا،تاہم ،کیا یہی طریقہ ہے جس سے میں خدا سے کی گئی دعا کو سمجھ سکتا تھا اور خدا کی مرضی اس سے کس طرح سے مختلف تھی ۔تو دعا کرنے کا مقصد کیا ہے اور ہم خدا کی مرضی کو کس طرح سے جانتےہیں۔

ہماری تاریخ کی ایک مثال

جب ہم خدا کی مرضی کو بدلنے کے لیے دعا کرتے ہیں،خاص طور پر چرچ کی تاریخ میں ایک کہانی ذہن میں آتی ہے۔جوزف سمتھ اور ایک سو لہ صفحات ۔ہم میں سے کافی مارٹن ہیرس کو جانتے ہیں جو اس کہانی کا حصہ تھا ۔پر جتنا یہ تجربہ جوزف سمتھ کے ساتھ جوڑا تھا اتنا ہی مارٹن ہیرس کے ساتھ بھی جوڑا تھا۔جوزف نے تین با ر خد ا سے پوچھا کہ کیا مارٹن ہیرس صفحات کو لے جا سکتا ہے ،اور خدا نے اسے کہا ہاں، مگر۔۔۔لیکن یہ ایک بڑی درخواست ہے ۔کیا جوزف کی دعا نے خدا کی مرضی کو بدلا؟خدا نے اس کی درخواست کو قبول کیا گرچہ کافی بار نہ کرنے کے بعد بھی۔
کتا ب مورمن میں بھی ہمیں کافی مثالیں ملتی ہیں۔اگر ہم انس کی دعا کے متعلق بات کرے ۔کہ اس نے خدا سے ایک بڑی درخواست کے لیے پوچھا:کہ نیفی کی تاریخ محفوظ ہو سکتی ہے۔اور کتاب ہیلمین کے نبی نیفی نے خدا سے قحط اور پھر بارش بھیجنے کے لیے درخواست کی ،اور اس نے کیا،اور سوال یہ ہے کیوں خدا نے ان کی اہم درخوستوں کو قبول کیا؟کیونکہ وہ خدا کی مرضی کے مطابق تھی ،یا یہ بھائی ہم سے زیادہ خدا کے وفادار تھے ؟اور ہم یہ کیسے جان سکتے ہیں؟

خداکی مرضی سے کیا مراد ہے؟

میں سٹیک کانفرس میٹنگ میں بیٹھا ہوا تھا اور دوسر ے دن جب ہم  ،خدا کی مرضی، کےبارے بات کررہے تھے ،میں سوچ رہا تھا کہ خدا کی مرضی کا کیا مطلب ہے ؟کچھ تحققات کے بعد ،مجھے بتہ لگ گیا کہ امید اور خواہش کیا ہے ۔تو چلے ہم اپنے سوالات کو دوبارہ سے بیان کرتےہیں:خدا کی طرف سے امید اور خواہش سے کیا مراد ہے َ؟ میں یقین کرتا ہوں کہ خدا کی خواہش یا امید یہ ہے کہ جب ہم اس کے پا س واپس جائے گے تو تب ہم بہت خوش ہوں گے  اوراپنی وفاداری اور وفادار ثابت ہو کر بہتر اور مضبوط بنے گے موسیٰ ۱:۳۹میں میرے لیے میں جانتا ہوں،ہم ہمیشہ سے اور پہلے سے جانتےہیں کہ خدا کی مرضی ہمارے لیے کیا ہے۔اور ہمارے لیے سیکھنا اور خوش رہنا ۔ایلڈر کریسٹفرسن اس کو اس طرح بیان کرتے ہیں:
اور خدا کی مرضی یہ ہے کہ ہم مرد اور عورتے اس دنیا میں آزادی سے اپنی روحانی اور جسمانی صلاحیت کے مطابق آگے بڑھنے میں کامیاب ہوں،کہ ہم غربت کے ذلت مند حدوں اور گناہوں کی غلامی سے آزاد ہو جائیں،آزادی اور خود انحصاری میں کی مسرت میں خوش رہ سکے ،اور اپنی تمام چیزوں میں اسکے سورج کے جلال کی بادشاہی میں جانے کےلیے خودکو تیار کرسکے ۔
اور شاید جب ہمیں ہمارے سوالات کا جواب نہیں ملتا تو ہم مایوس ہو جاتے ہیں،اور بعض اوقات ہم یہ فیصلہ نہیں کر پا تے کہ یہ روح ک طرف سے ہے یا ہمارے اپنے خیالات ،جب آگے نہیں بڑ ھ پاتے تو اہم ایسا محسوس کرتے ہیں پتہ نہیں خدا ہم سے کیا چاہتا ہے۔تو یہ انقلاب کی طرح ہو سکتا ہے کہ ہم دعا کیوں اور کس لیے کرتےہیں۔

ہم دعا کیوں کرتے ہیں؟

دعا خواہشات کی فہرست نہیں ہے اور نہ ہی یہ غلط فہرست کی جگہ ہے ،اگرچہ ہم اس کو اسی طرح سے سمجھتے ہیں۔یہ بات چیت کی طرح ہونی چاہیے ،خدا کی مرضی کے مطابق چلنے کا وقت اور اس سے سوالات پوچھ سکتے ہیں اور ہم یہ جانتے ہیں۔

تاہم ہم سے کافی لوگ اس۲ نیفی ۴: ۳۵ سے واقف ہونگے جو بیان کرتی ہےہاں میں جانتا ہوں کہ مانگنے والوں کو خدا فیاضی کے ساتھ دیتا ہے اور اگر میں ناواجب مانگوں تو میرا خدا مجھے نہ دیگا۔
تھامے رکھو، تو نہ صرف مجھے خدا کی مرضی کی ضرورت ہے، لیکن وہ صرف وہی چیزیں دے گا جن کو میں مانگتا ہوں جو وہ مجھے پہلی جگہ سے دینا چاہتا تھا یہ الجھن ہے. لیکن اگر ہم دعا کے مقصد کے بارےتھوڑا غور کریں تو، شاید ہم بہتر سمجھ سکتے ہیں کہ دعا ایک تحفہ ہے اور یہ خدا کی مرضی سے کیسے فٹ بیٹھتا ہے.ایلڈر جےڈین اکتوبر کانفرنس ۲۰۱۱ میں کہتے ہیں۔چھوٹے بچے ،نوجوان لوگ،اور بالغ ، اور آپ اس بات پر یقین رکھے کہ آسمانی باپ آپ سب سے بہت پیار کرتا ہے اور آپ کو برکات دینا چاہتا ہے ،اور اسی وجہ سے وہ ہماری آزاد مرضی کی خلاف ورضی نہیں کرے گا،ہم ہمیشہ مدد کے لیے اس سے دعا کرسکتے ہیں ۔اور یہ عام طور پر دعا سے ہی کیا جاتا ہے خدا کی طرف سے دیا انسان سب سے قیمتی تحفہ دعا ہے ۔ ۲۰۱۵ میں صدر آئرنگ مزید بیان کرتے ہیں۔
جب آپ گھٹنے ہوتے ہیں یا آپ سر کو باندھتے ہیں تو اس کے لیے پوری طرف توجہ دینا آسان ہے، لیکن یہ محسوس کرنا ممکن ہے کہ آپ اپنے آسمانی باپ کے سادہ اور کم رسمی ، میںدعا
میںپہنچیں،کیونہ ایسا آپ کو اپنی ہر کہاتی میٹنگ میں کرنے کی ضرورت ہے ۔مگر آپ کا زیادہ دن شور اور ان لوگوں کے درمیان گزارتاہے جو آپ کے ارگرد ہیں۔خدا باپ ہماری دعاوں کو سنتا ہے ،لیکن اسی وقت ہمیں پریشنانیوں ختم کرنے کے بارے سیکھنا ہے کیونکہ انہی لمحوں میں ہمیں خدا کے ساتھ تعلق قائم رکھنے کی ضرورت ہوتی ہےصدر [جوزف ایف] سمتھ نے تجویز کیا کہ آپ کو دعا کرنے کی ضرورت ہے کہ خدا آپ خدمت کرنے کی بلاہٹ کو تسلیم کرے گا ۔ وہ پہلے سے ہی آپ کے بلاہٹ کو آپ کے مانگنے سے پہلے آپ کے بارے مکمل تفصیل جانتا ہے،وہ آپ کو بلاتا ہے اس سے دعا کے زریعے آپ اس سے مانگتےہیں. وہ آپ پر مزید ظاہر کرے گا کہ آپ اسے جانے ۔
ن کی کوڈس کے مطابق، دعا ہمارے لئے خدا کے ساتھ بات کرنے کا موقع ہے اور اس سے ہم اس پر بھروسہ کرنا سیکھتے ہیں اور اس کے خاص مقصد اور رہنمائی کے لئے اپنی ضرورت کو تسلیم کرتے ہیں
اس کا ایک بڑا حصہ یہ جاننا ہے کہ ہم کس طرح سے خدا سے مانگ سکتےہیںوہ راستہ دیکھائیں جو وہ دیکھ سکتا ہے ہم نہیں ۔ وہ ہمیشہ ہماری خوشی اور ترقی چاہتا ہے،
شاید جب ہم دعا کرتے ہیں تو “پوچھنا چاہتے ہیں کہ” مجھے کیا کرنا ہے؟ “شاید ہم اپنی آزاد مرضی کے مطابق فیصلات لینے میں مشق کر سکتے ہیں اور پوچھیں،” کیا یہ فیصلہ مجھے خوش دے گا؟ “ہم اس سے پوچھ سکتے ہیں اور انجیل کے راستے کے بارے میں سیکھنے کے لئے دعاوں کی کوششیں کریں. انجیل کے اصولوں کو اپنے دلوں کی توثیق بنائے۔ مزید قدرتی طور پر اپنی خواہشات کو خدا کے ساتھ جوڑے.
یہ سب شروع میں ہماری مثالوں پر کیسے لاگو ہوتا ہے؟ جب یوسف نے اپنے دوست مارٹن کو شکریہ ادا کرنے کی خواہش کو ظاہر کیامورمن کی کتاب کے ثبوت کو حاصل کر تے وقت ، تو خدا کی خواہش کے مطا بق اس کی انجیل کو مستحق یا ثابت نہیں کرنا تھا. یہ ایمان اور برداشت کرنے والی مہارتوں کو سکھانے کے لئے تھا جو بالآخر یوسف اور مارٹن کو خدا کو قریب کےلانا تھا اور ان کی وفاداری میں خوشی تلاش کرنے کے لئے سیکھنے میں مدد دینا تھا. خدااس کو جلدی سے کرنے کا طریقہ جانتا تھا اوراس بات کا انہیں اندازہ نہیں تھا. لیکن وہ ایجنسی کی بھی قدر کرتا ہے، اور اس نے یوسف کے لئے جوزف کی اپنی مرضی کے ساتھ عمل کرنے کی اجازت دی ہے. لیکن اس نے اپنی مرضی کو تبدیل نہیں کیا، مگر جب ہم اسے سننے کے لئے تیار نہیں ہوتے ،، تو کبھی کبھی ہمیں ہماری آزاد مرضی کی مشق کے ذریعہ سیکھنے دیتا ہے جس کا نتیجہ ہماری زندگیوں میں خوشی یا مصیبت کو لاتا ہے ۔
دوسری جانب ،انوس اور نیفی کی مثالوں میں،دونوں کی آسمانی باپ کی طرح ایک ہی خواہش تھی لوگوں کو خدا کے نزدیک لانا اور الہیت کے بارے بتانا۔انہوں نے خدا سےان چیزوں کو مانگا جو وہ جانتے ہیں تھے ج درست ہیں انہوں نے راستبازی اور فرمانبراری کو فروغ دیا،اور انہوں نے خدا سے ایسی چیزوں کی خواہش نہیں کی جو متفق نہ ہو۔مطلب انہوں نے نفسانی آدمی کے جیسی خواہشات کو نہیں چنا۔
ہم خدا کی مرضی کو تبدیل نہیں کر سکتے ہیں، نہ ہی ہم اصل میں چاہتے ہیں آسمانی باپ کی بڑی تصویر کے بارے سوچنے سے ہم سیکھتے ہیں جو شروعات سے ہی اس کے ذہن میں ہے جس کو ہم نے تسلیم کرنا ہے
وہ جانتا ہے جو ہماری ترقی خوشحالی اور سرفرازی کا سبب بنے گی ،اورہماری اپنی خواہشات آہستہ آہستہ تبدیل ہو کر اس کے ساتھ مل  جائیںنگی،اور جن چیزوں کوحاصل کرنے کے لیے ہم دعا کرتے ہیں وہ بھی بدل جائیں گی ۔اس کا مطلب یہ ہے کہ ہم صرف اپنی دعاوں کا جواب اس  لیے حاصل کر تے ہیں جس کا تصور ہم نے کیا ہے جیسا کہ ہم آمادہ نہیں کرتے ہیں.
دعا خد کی طرف سے ہر ایک انسان کو دیا گیا ایک قیمتی تحفہ ہے ۔اس کے بارے سوچے :سب سے اعلیٰ ہے ،جو تمام کے بارے جانتا ہے ، تمام دیکھ رہا ہے ،تمام لوگوں میں سے بٹری قدرت رکھنے والا،
جو میری اور آپ کی رہنمائی کرتا ہے جیسا کہ غیر معمولی طور پر ہم ہیں، ہمارے والد کے طور پر اس سے بات کرنے کے لئے. اصل میں، کیونکہ
وہ جانتا ہے کہ ہمیں اس کی راہنمائی کی کتنی ضرورت ہے وہ حکم دیتا ہے ،اپنے دلوں میں دعا کرے جیسا ہم اس دنیا میں آنے سے ہوپہلے کرتے تھے ایک راز کی طرح ،عوام میں خفیہ طور پاس

اس مضمون کو اس کےاصلی لنک سےپڑھنےکے لیے یہاں کلک کریں ldsliving.com

Pin It on Pinterest

Share This